Saudi Rulers: Do not make Sheikh Nimr the Shaheed al Sabeh of Shia Islam

by Ali Abbas Taj

nimr-shia-execution-saudi.siShia Islam is no stranger to martyrdom. Historically, the retrogressive monarchies in the Arabian peninsula have been carrying out genocidal campaigns against the Shias. In such campaigns, they have been routinely killed Shia scholars whose understanding of Islam was acknowledged by even their Sunni contemporaries. The respected five martyrs of Shia Islam fell to the intolerance and bigotry of fanatical kings ruling the Muslim world.

Is Saudi Arabia guided by the Takfiri-Wahabi ideology going to create another Shia martyr whose knowledge of Islam has inspired generations of Shia and Sunni scholars and ordinary people? Ayatollah Sheikh Nimr’s understanding of Islam inspired people including the very daughter of King Abdullah who wants the Sheikh hanged. In this video, Princess Sahar, a daughter of King Abdullah, praises Sheikh Nimr. She remains under house arrest and the Sheikh faces the gallows: 

“We learn determination from Ayatollah Nimr al-Nimr, the Sheikh of free men,” Sahar said referring to Sheikh Nimr al-Nimr, who was attacked, injured and arrested by security forces in Qatif region over calls for the release of political prisoners. “For this reason, we will press ahead on the path by our own will,” she stated in the VDO message. “And we will become victorious with faith in God. Good luck, you who have honored us by raising the flags of freedom. Your sisters, Sahar and Jawahir,” she added. Al Mana said Sahar, along with her three sisters, is confined in a house in Jeddah, Saudi Arabia. – See more at:http://lubpak.com/archives/312822

Here is a historic compilation of the greatest Shia Islamic Scholars and human rights activists killed for freedom of speech and freedom of expression:

Shaheed al Awal

Muhammad Jamaluddin al-Makki al-Amili (1334–1385) was the First Martyr and the author of Al-Lum’ah ad-Dimashqiya(اللمعةArabicالدمشقية‎ “The Damascene Glitter”).

He was born in 734 A.H (ca. 1334 ) in Jabal ‘Amel and was killed on Thursday the ninth of Jumada al-awwal, 786 A.H. (ca. 1385), according to the fatwa of a Maliki jurisprudent that was endorsed by a Shafi`i jurisprudent.He was a pupil of the pupils of Allamah Hilli, amongst them Allamah’s son, Fakhr al-Muhaqqiqin. Shi’i schools were banned and almost gone in Jabal ‘Amel. When Muhammad al-Makki was 16 years old, he ventured to al-Hilla in Iraq where he was certified by Fakhr al-Muhaqqiqin the son of the famous al-Hilli.By the age 21, he returned to Jabal ‘Amel and was already certified to narrate hadiths by many other famous scholars of Shi’a and Sunni doctrines of NajafHebronMakkaMedinaQudsDamascus, and Baghdad. He also built good relations with Sultan Ali ibn al-Mu’ayyad (Arabicعلي ‎بن المؤيد) of Khorasan.After one-year imprisonment, he was killed by the sword, then crucified, then stoned, and finally his body was set to fire in Damascus in the days of the Sultan Barquq. Due to the crusaders wars the area was suffering from poverty and ignorance was rampant as the Mamlukes took over and established a despotic rule in the region.

The First Martyr came from a very distinguished family, and the generations that succeeded him preserved this honour. He had three sons who were all ‘ulema and jurisprudents, and his wife and daughter were likewise jurisprudents.

Shaheed al Thani

Zayn al-Din al-Juba’i al’Amili (1506–1558) was the Second Martyr, and the author of the first Sharh of Shahid Awwal‘s Al-Lum’ah ad-Dimashqiya (The Damascene Glitter) titled as Ar-Rawda al-Bahiyah fi Sharh al-Lum’ah ad-Dimashqiya (الروضة البهيّة في شرح اللمعة الدمشقيّة ) (The Beautiful Garden in Interpreting the Damscene Glitter).
He was one of the greatest shi’a scholars. He studied under famous Sunni and Shi’a in Jabal ‘AmelDamascusCairoJerusalem among many others. He was known and respected by sunnis in Baalabeck for this. He was authorized to teach Muslims in the Nouriyah Islamic school according to the five schools of thought.
He became a Mujtahid at age 33 after his visits to Iraq. Since Ijtihad was forbidden and Shi’ism had a history of persecution in the area, especially that shi’ism was still strong among the people as a result of the not-so-long gone Hamdanid dynasty, some people conspired against him due to petty reasons before being judged in front of the Sultan.
He was a widely travelled man, having visited Egypt, Syria, Hijaz, Tihamah, Baitul Muqaddas, Iraq and Constantinople (Istanbul). Always in pursuit of knowledge, he studied from nearly twelve Sunni Ulama of fiqh. Apart from the proficiency in fiqh, he was well versed in Usool, Philosophy, Irfan, Medicine and Astronomy.
He was a man of piety, known for his austere way of life. His students have recorded in his biography that Shaheed maintained his family by selling the woods cut by himself during the nights, and then sat to teach during the day. While in Ba’lbak, he conducted classes in Fiqh according to five schools, i.e. Ja’fari, Hanafi, Shafei, Maliki and Hambali. His Sharh al-Lum’ah is a part of curriculum in almost every Hawza even today. He studied from Muhaqqiq Karaki before the later migrated to Iran.

In Rajab of 965 A.H. (1558), he was beheaded on his way to see the sultan and a shrine was built by some Turkmens on the site as they realised his stature. The person that beheaded him was killed by the Sultan orders.

Shaheed al Thalith

Qazi Zia-ud-Din Nurullah Shustari, Amir Sayyid (1549–1610) was the Third Martyr and the author of Majalis ul Momineen.
He was an eminent jurist and alim of his time. He was born in 956 A.H. at Shushtar, one of the cities of the present Khuzestan province in South of Iran. He was sayyid by lineage and belonged to the Mar’ashi family. Qazi Nurullah Shustari was the most important Shi’a scholar of the Mughal period.[3]
His father was Sayyid Muhammad Sharif-ud-din and grandfather Sayyid Zia-ud-Din Nurullah. He received his early education at home under the tutlage of his grandfather and his father and other local tutors. In the year 979 AH he went to Mashhad, the holy city in the Khurasan province.
It was during Akbar’s period, on 1 Shawwal 992/6 October 1584, Nuru’llah Shustari moved from Mashhad to India.,[4] and by another account in 1587.[5]
He was appointed an emissary by Akbar in Kashmir and was instrumental in pacifying a revolt which was in offing and he obtained the first census of the areas of Mughal Empire during Akbar’s reign. This earned him great respect and trust of the Mughal emperor. On his return he was appointed as Chief Qazi (Qazi Quzaz), position equivalent of Chief Justice, of the Mughal empire.[6][7]

Under Jehangir‘s reign he continued to hold the same high position as in Akbar’s time. But his position was now threatened because of Jehangir’s more orthodox nature. Other groups which had tried to malign his position during Akbar’s reign had once again become powerful and influential. Moreover he had made enemies from his involvement in settling of disputes in Kashmir and Agra. His book Ahqaq-ul-Haq (Justification of the Truth) was brought as an evidence against him.

Qazi Nurullah Shustari was flogged to death by Jahangir’s order because of his writings and he was seventy years old at this time.[9][10]
Qazi Nurullah is known since that time as Shaheed-e-Salis (also Shahid al-Thalis) or the Third Martyr.

Shaheed al Rabi’

Mir zah (Means- Mir) Muhammad Kamil Dehlavi was the Fourth Martyr and the author of Nuzhat-e-Isna Ashariya (نزھۃ اثنا عشريۃ). This book was a complete response to Shah Abdul Aziz Dehlavi‘s Tauhfa Ithna Ashari. It was due to this book that he was poisoned by the Ruler of Indian state of Jhajhar.[11]

Shaheed al Khamis

Grand Ayatollah Sayyid Muḥammad Bāqir al-Ṣadr (March 1, 1935 – April 9, 1980) was an Iraqi Twelver Shi’a cleric, a philosopher, and ideological founder of Islamic Dawa Party born in al-KazimiyaIraq. He is the father-in-law of Muqtada al-Sadr and cousin of both Mohammad Sadeq al-Sadr and Imam Musa as-Sadr. His fatherHaydar al-Sadr was a well-respected high-ranking Shi’a cleric. His lineage goes back to Muhammad, through the seventh Shia Imam, Musa al-Kazim. (See Sadr family for more details.)

His father died in 1937, leaving the family penniless. In 1945 the family moved to the holy city of Najaf, where al-Sadr would spend the rest of his life. Muhammad Baqir al-Sadr completed his religious teachings at religious seminaries under al-Khoei and Muhsin al-Hakim at the age of 25 and began teaching.

While teaching he became a prominent member of the Iraqi Shia community, and was noted for his many writings. His first works were detailed critiques of Marxism that presented early ideas of an alternative Islamic form of government. Perhaps his most important work was Iqtisaduna, one of the most important works on Islamic economics. This work was a critique of both socialism and capitalism. He was subsequently commissioned by the government of Kuwait to assess how that country’s oil wealth could be managed in keeping with Islamic principles. This led to a major work on Islamic banking that still forms the basis for modern Islamic banks.

He also worked with Sayyid Mohammed Baqir al-Hakim in forming an Islamist movement in Iraq. This attracted the attention of the Baath Party, which resulted in numerous imprisonments for the Ayatollah. He was often subjugated to torture during his imprisonments, but continued his work after being released.
In 1977, he was sentenced to life in prison following uprisings in Najaf, but was released two years later due to his immense popularity. Upon his release however, he was put under house arrest. In 1980, after writing in the defense of the Islamic Revolution, Sadr was once again imprisoned, tortured, and executed by the regime ofSaddam Hussein. His sister, Amina Sadr bint al-Huda, was also imprisoned, tortured, and executed. It has been alleged that Sadr was killed by having an iron nail hammered into his head[12] and then being set on fire. During the execution of Saddam Hussein, chants of “Long live Mohammed Baqir Sadr!” were heard being chanted by some of the Shi’a guards. CNN article

Shaheed al Sadis

Ayatollah Mohammad Baqir al-Hakim (1939- 29 August 2003; Arabic: سيد محمد باقر الحكيم), also known as Shaheed al-Mehraab, was a senior Iraqi Shia cleric and the leader of the Supreme Council for Islamic Revolution in Iraq. He was assassinated in a bomb attack in Najaf in 2003. On 30 August 2003, Iraqi authorities arrested four people in connection with the bombing: two former members of the Ba’ath Party from Basra, and two non-Iraqi Arabs from the Salafi sect (a Sunni sect).

According to U.S. and Iraqi officials, Abu Musab al-Zarqawi was responsible for Hakim’s assassination. They claim that Abu Omar al-Kurdi, a top Zarqawi bombmaker who was captured in January 2005, confessed to carrying out this bombing. They also cite Zarqawi’s praising of the assassination in several audiotapes. Muhammad Yassin Jarrad, the brother-in-law of Abu Musab al-Zarqawi claimed that his father, Yassin, was the suicide bomber in the attack.[8][9] Oras Mohammed Abdulaziz, an alleged Al Qaeda militant, was hanged in Baghdad in July 2007 after being sentenced to death in October 2006 for his role in the assassination of al-Hakim.[10]

Shaheed al Sabeh

Shia Islam does not need another Shahid, it maybe argued it is not in the interest of the Saudi despots to have one either.  When his own daughter seeks inspiration from Sheik Nimr, King Abdullah should rethink this execution. Let us all take action:

 

FOR UNITED STATES – BASED SUPPORTERS

FOR SUPPORTERS OUTSIDE UNITED STATES

 

 

For background on Sheikh Nimr, refer to SOS from Saudi Arabia: Rights activist and dissident Sheikh Nimr facing execution and Saudi Shia cleric Nimr al-Nimr ‘sentenced to death’

https://www.change.org/p/the-king-abdullah-of-saudi-arabia-release-sheikh-nimr-al-nimr-immediately

References

  1. Meerza Muhammad Suleman Tankabini, Qasas-ul-Ulema (Stories of Ulema)
  2.  Muhammad Hussain Najafi, Shuhada-e-Khamsa kay Halaat-e-Zindagi
  3.  Stewart R. Sutherland, The World’s Religions (1988) pp. 383
  4.  Saiyid Athar Abbas Rizvi, A Socio-intellectual History of the Isnā Asharī Shīaīs in India (1986) pp. 346
  5.  John Norman Hollister, The Shi’a of India (1953) pp. 140
  6.  Iqtidar Husain Siddiqi, Majmaʻulafkār (1993) pp. 15
  7. John Norman Hollister, The Shi’a of India (1953) pp. 140
  8. Annemarie Schimmel, Corinne Attwood, Burzine K. Waghmar: The Empire of the Great Mughals pp. 109
  9. Jan-Peter Hartung, Helmut Reifeld: Islamic education, diversity and national identity: Dīnī madāris in India (2006) pp. 107
  10. Arthur Llewellyn Basham: A Cultural History of India (1975) pp. 290
  11. Muhammad Hussain Najafi, Ahsan ul-Fawaid pp. 38
  12. Anthony Shadid, Night Draws Near: Iraq’s People in the Shadow of America’s War, (Holt, 2005), p.164

Martyrs of Shia Islam

3 thoughts on “Saudi Rulers: Do not make Sheikh Nimr the Shaheed al Sabeh of Shia Islam

  • October 18, 2014 at 3:34 pm
    Permalink

    Riyadh is the capital of KSA

    Reply
    • October 19, 2014 at 3:44 pm
      Permalink

      Thank you. We have fixed the error.

      Reply
  • October 19, 2014 at 3:51 am
    Permalink

    شیخ النمر – سعودی عرب میں ضمیر کا قیدی
    عامر حسینی
    شیعہ مکتبہ فکر میں ” انکار ، مزاحمت ، جہاد اور آزادی ” کی روائیت بہت پرانی ہے اور اس کا آغاز خود حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم کی زات گرامی سے ہی ہوجاتا ہے اور شہادت ہے مطلوب و مقصود مومن کا ماٹو بھی شیعہ مکتبہ فکر میں بنیادی حثیت کا حامل ہے
    شہادت کا راستہ شیعہ مکتبہ فکر میں وہ راستہ ہے جس پر ابتک لاکھوں لوگوں نے سفر کیا ہے اور اس راستے پر ہزاروں سنگ میل ایسے ہیں جن پر ہزاروں نام جگ مگ ، جگ مگ کرتے نظر آتے ہیں ، ڈاکٹر علی شریعتی نے کہا تھا کہ شیعت تو کربلا میں حسین کی شہادت سے دمشق تک شریکۃ الحسین ، ام المصائب کے دربار و زندان دمشق تک کے سفر کا نام ہے اور اس کا صفوی / مہاجنی شیعت سے کوئی علاقہ ہے نہ واسطہ
    شہادتوں کا جب زکر شیعہ کے ہاں ہوتا ہے تو میدان کارزار سے محراب و منبر تک اپنے نظریات اور افکار پر قائم رہ کر شہادتیں پانے والوں میں کئی لوگوں کے نام آتے ہیں ، لیکن علم و فکر کے میدان میں بھی شیعہ کے ہاں ایسے چھے شہید موجود ہیں جو اس لیے شہید کردئے گئے کہ ان کے قلم اور ان کے زبان سے جو تخلیق کے سوتے پھوٹ رہے تھے ، ان سے شعور ، بیدار ، حریت فکر کی روشنی چار سو پھیلنے لگی تھی اور ظالموں کے ظلم کی حکومت کو ہر طرف سے چیلنچ کیا جانے لگا تھا ، ان شہیدوں کو شیعی کتابوں میں ” چھے شہیدوں ” کے طور پر جانا جاتا ہے اور یہ چھے شہید اپنے علم و فکر کے پھیلاؤ کی وجہ سے شہید کردئے گئے
    اب آثار ایسے نظر آرہے ہیں کہ سعودی عرب کے مشرقی صوبے کے شہر العوامیہ سے شیعہ مکتبہ فکر شہید سابع یعنی ساتواں شہید ملنے والا ہے اور اس شخصیت کا نام شیخ باقر نمر النمر ہے جن کو سعودیہ عرب کی ایک عدالت نے سزائے موت سنادی ہے
    شیخ نمر النمر سعودیہ عرب میں ایک طرف تو شیعہ اکثریت کے دو صوبوں الحصاء اور قطیف کے حقوق اور شیعہ آبادی کے سول و جمہوری حقوق کے لیے عدم تشدد پر مبنی جدوجہد اور مزاحمت کررہے ہیں تو دوسری طرف وہ سعودی عرب میں آل سعود و وہابی ملائيت کے اتحاد پر مبنی فاشسٹ نظام حکومت کے خاتمے کے علمبردار بھی ہیں
    شیخ باقر نمر النمر کہتے ہیں کہ اگر آل سعود سعودی عرب کے مشرقی صوبوں کی اکثریت آبادی کے ںطریات ، عقائد اور خیالات کی عزت نہیں کرسکتی اور ان کو دوسرے صوبوں کے لوگوں کی طرح حقوق نہیں دے سکتی تو پھر ان صوبوں کو آزادی ملنی چاہئیے ، شیخ باقر نمر النمر عراق کے کردستان کو بھی آزادی دینے کی حمائت کرتے ہیں اور کہتے ہیں جو بھی قوم آزادی چاہتی ہو ، اسے زبردستی کسی دوسری قوم کی طرف سے اپنے ساتھ ملانے پر اصرار نہیں کرنا چاہئیے ، شیخ باقر نمر النمر ایک آزاد منش مزاحمت کار اور شیعہ عالم ہیں جو نہ تو سعودیہ عرب میں حزب اللہ کی شاخ کے ممبر ہیں اور نہ ہی ایران نواز خیال کی جانے والی شیعہ کمیونٹی ، الاصلاحیہ سے منسلک ہوئے ، وہ عورتوں ، نسلی و مذھبی اقلیتیوں کے حوالے سے بہت روشن خیال اور ترقی پسند خیال کئے جاتے ہیں ، شیخ نمر سعودیہ عرب میں صرف شیعہ کمیونٹی کے اندر ہی نہیں بلکہ سنّی کمیونٹی کے اندر بھی قدر کی نگاہ سے دیکھے جاتے ہیں ، خود اعتدال پسند سلفی نوجوانوں میں ان کو عزت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے -اور شاید یہی وجہ ہے کہ سعودی عرب کی حکومت ان سے بری طرج خوفزدہ ہے
    شیخ نمر کے مداحوں میں سعودی عرب کے بادشاہ عبداللہ کی بیٹی شہزادی سحر بھی شامل ہے جس کو عورتوں کی آزادی کے حق میں اور آل سعود کے جابرانہ ںطام کے خلاف آواز اٹھانے کی پاداش میں گھر پر ںظر بند رکھا گیا ہے
    شیخ نمر امریکی عوام اور شیعہ کے درمیان اتحاد اور یک جہتی کے داعی بھی ہیں جو ان کے مطابق آزادی اور شہری حقوق پر یکساں یقین رکھنے والے ہیں
    شیخ نمر کی جدوجہد کے نتیجے میں سعودی عرب کے مشرقی صوبے میں بیداری اور شعور ایک منظم طریقے سے سامنے آئی اور 2011ء کے آخر میں سعودی حکومت کے خلاف زبردست جدوجہد سامنے آئی اور 2012ء میں یہ بڑے بڑے مظاہروں میں بدل گئی ، جسے تجزیہ نگاروں نے ” سعودی عرب میں عرب بہار ” سے تعبیر کرنا شروع کردیا ، ان مظاہروں کی قیادت شیخ نمر کررہے تھے ،اسی دوران شیخ نمر پر قاتلانہ حملہ بھی ہوا ، ان کے پیر میں گولی بھی لگی ، جبکہ اس سے پہلے 2004ء اور 2006ء میں بھی شیخ نمر النمر کو گرفتار کیا گیا تھا اور 2009ء میں بھی ان کی گرفتاری عمل میں آئی تھی
    injured Nimr
    جولائی 2012ء میں ان کو سعودی سیکرٹ اینڈ انٹیلی جنس پولیس جوکہ المباحث العامة کہلاتی ہے نے گرفتار کرلیا اور ان پر بغاوت ، غداری ، سازش اور سعودی حکومت ک خلاف فساد پھیلانے کے الزامات عائد کئے گئے اور ان کے خلاف ان الزامات کے تحت خفیہ ٹرائل کیا گیا اور اکتوبر 2014ء میں سعودی قاضی نے ان کو سزائے موت سنادی
    شیخ نمر کو سزائے موت سنائے جانے کی خبر ان کے بھائی محمد نمر نے ایک ٹوئٹ کے زریعے دی جبکہ سعودی حکام اسے چھپانے کی کوشش کررہے تھے ، جیسے ہی یہ خبر عام ہوئی تو سعودیہ عرب کے اندر بھی اس پر بڑے پیمانے پر احتجاج شروع ہوگیا ہے ، سعودیہ عرب کے مشرقی صوبے میں بڑے ، بڑے مظاہرے ہوئے ہیں ، جبکہ مڈل ایسٹ میں کام کرنے والی انسانی حقوق کی تنظیمیں اس پر احتجاج کررہی ہیں اور عالمی برادری سے سعودیہ عرب پر دباؤ بڑھاکر شیخ نمر کو آزاد کرانے کا مطالبہ کررہی ہیں
    demonstrators-gather-in-qatif-saudi-arabia-following-the-arrest-of-shiite-cleric-and-goverment-critic-sheikh-nimr-al-nimr-on-july-8
    شیخ نمر کو سزائے موت سنائے جانے کے خلاف قطیف سعودی عرب میں مظاہرے کا منظر
    سعودی فائرنگ

    سعودی عرب مشرقی صوبے میں آل سعود کے خلاف ہونے والے مظاہروں کا ایک منظر ، جس میں پولیس نے گولی چلادی تھی اور اس میں دو سعودی بچے بھی شہید ہوئے تھے ،جبکہ شیخ نمر کے نوعمر بھتیجے کو گرفتار کیا گیا تھا اور اسے سزائے موت سنادی گئی تھی
    آیت اللہ خوئی فاؤنڈیشن نے اس حوالے سے امریکی حکومتی اداروں ، ممبران سینٹ و کانگریس اور انسانی حقوق کی تںطیموں کو 20 ہزار سے زائد خط ارسال کئے ہیں جبکہ دنیا بھر سے اس پر ردعمل بھیجا جارہا ہے اور شیخ نمر کی سزا منسوخ کرنے اور ان کو رہا کرنے کے لیے آوازوں میں اضافہ ہورہا ہے
    شیخ نمر جیسی آوازیں سعودیہ عرب کے اندر بہت اہمیت کی حامل ہیں ، جیسے سامی محسن عنقاوی کی سعودی عرب کی تاریخ دشمنی کے خلاف آواز ہے اور پرنس سحر جیسی آوازیں ہیں ، ار سب آوازوں کو یک جہتی کے اظہار کی ضرورت ہے جو ضرور کی جانی چاہئیے ‎
    سید ابومحمد مكي ملقب به جمال الدين و شرف الدين عاملی جوکہ معروف کتاب اللمعۃ الدمشقیۃ کے مصنف تھے – پہلے وہ قید کئے گئے ، پھر ان کو سنگسار کردیا گیا اور شیعہ مکتبہ فکر میں وہ شہید اور کے طور پر پہچانے جاتے ہیں ، یہ شیعہ عالم شیخ حر الاملی کے شاگروں کے شاگردوں میں شمار ہوتے تھے یہ 1334ءء میں پیدا ہوئے اور 1385ء میں شہید کردئے گئے ، یہ واقعہ دمشق میں پیش آیا جب سلطان برقوق کی حکومت تھی اور سنگساری کے بعد ان کی لاش کو جلادیا گیا تھا ، شیعہ مکتبہ فکر میں وہ شہید اول کے طور پر مشہور ہیں
    شیخ ضیاء الدین جبہی العاملی جوکہ 1506ء میں پیدا ہوئے اور وہ جبل عامل سمیت قاہرہ ، دمشق وغیرہ میں شیعہ اور سنّی دونوں کے مدارس میں پڑھے اور چاروں سنّی فقہ و فقہ جعفریہ کے مستند عالم مانے جاتے تھے ، یہ 1558ء میں سلطان دمشق سے ملنے جارہے تھے کہ راستے میں ان کا سرقلم کردیا گیا ، انھوں نے اپنی ایک سوانح عمری بھی لکھی تھی جو ان کے خاندان نے محفوظ رکھی اور ایک شرح انھوں نے شہید اول کی کتاب ” المعۃ الدمشقیۃ ” کی بھی لکھی تھی اور ان کو شیعہ مکتبا فکر میں شہید ثانی کے طور پر جانا جاتا ہے
    قاضی نور اللہ شوشستری 1549 ء میں موجودہ خوازستان ایران کے شہر شوشستر میں پیدا ہوئے اور وہ اکبر کے زمانے سے ہندوستان میں مغل بادشاہوں کے قریب تھے ، بہت عالم فاضل آدمی تھے ، مغلوں کے دربار میں ایرانی اور ترک ، روہیلا پٹھانوں کے درمیان قربت دربار کے حوالے سے کشمکش چلتی رہتی تھی ، ہمایوں ، اکبر کے زمانے تک مغل سلطنت پر سیکولر روائت غالب رہی لیکن جہانگیر کے زمانے میں شیخ احمد سرہندی کے زیر اثر پورے ہندوستان میں اینٹی شیعہ ، اینٹی ہندؤ اور یہاں تک کہ اینٹی سکھ فرقہ وارانہ مہم کا اثر دربار اور خود جہانگیر کے اپنے اوپر بھی ہوا ، اسی رجعت پسندی اور انتہا پسندی کی زد میں قاضی نور اللہ شوشستری بھی آئے ، انھوں نے شیعہ مذھب کے دفاع کے لیے فرنٹ فٹ پر بیٹنگ کی اس کی وجہ سے ان کو جہانگیر نے قید کردیا اور کوڑوں کی سزا سنائی ، کوڑے لگنے کے دوران ہی ان کی شہادت ہوگئی اور وہ شیعہ مکتبہ فکر میں شہید ثالث کہلائے ، ان کی شہادت کا زمانہ 1610ء کا ہے اور یہ جہانگیر بادشاہ کا دور تھا ، پھر شاہ جہاں سے لیکر عالمگیر کے دور تک ہندوستان میں صلح کلیت ، بھگتی ، ملامتی اور سیکولر ، روادار نظریات کے خلاف نہ صرف سماج کے اندر ملّاؤں کی تحریک مضبوط ہوتی چلی گئی بلکہ خود دربار بھی فرقہ پرستی سے لتھڑ گیا
    اور یہ سلسلہ عالمگیر کے زمانے میں اپنی انتہا کو پہنچ گیا ، عالمگیر نے شیخ احمد سرہندی کے فرقہ پرست تصوف اور سخت گیر جامد شرعی تصورات کو اپنالیا اور ان کی روشنی میں سخت گیر فرقہ پرست ملاؤں سے فتاوی عالمگیری تیار کروایا اور اس کو ہندوستان میں مغلیہ سلطنت کا کوڈ بنانے کی کوشش کی اور یہ وہی دور ہے جب مغلیہ دربار میں شیعہ مخالف ، ہندؤ و سکھ مخالف خیالات تیز ہوگیا اور پراسیکوشن بھی بڑھ گئی تھی اور عالمگیر کے مرنے کے بعد یہ سلسلہ اور زیادہ گھمبیر ہوگیا ، شاہ ولی اللہ کی وفات کے بات ہندوستان میں شیعہ -تنازعہ اس لیے بھی بڑھ گیا کہ شاہ عبدالعزیز پسر شاہ ولی اللہ نے ایک کتاب ” تحفۃ الشیعہ” لکھی جس کے بعد اس تنازعے میں شدت آگئی ، اور اس کتاب کا جواب مرزا محمد کامل دھلوی نے “نزھۃ الشیعہ ” لکھکر دیا ، نواب آف جھجر (ہندوستان میں روہتک کے نواح میں ایک دیسی ریاست) وہ خاصے سخت گیر اور شاہ عبدالعزیز کے پیرو تھے ، انھوں نے مرزا کامل دھلوی کو سازش کرکے زھر دلوادیااور اس سے مرزا کامل دھلوی کی شہادت ہوگئی اور اس طرح سے کامل دھلوی شیعہ مکتبہ فکر میں شہید رابع کے طور پر پہچانے جاتے ہیں
    شیعہ مکتبہ فکر میں شیعی روائت اور شیعی حریت فکر کے لیے شہادت پانے والے شہید خامس محمد باقر الصدر تھے ، یہ مارچ 1935ء میں پیدا عراق میں پیدا ہوئے اور انھوں نے شیعت کو دبانے اور جبر کا نشانہ بنائے جانے کے خلاف محمد حسن البکر و صدام حسین کی آمرانہ حکومت کے خلاف آواز اٹھائی ، جس کی پاداش میں صدام حسین نے ان کو شہید کردیا ، یہ عراقی دعوہ پارٹی کے بانی تھے اور اب شہید خامس کے لقب سے پہچانے جاتے ہیں
    آیت اللہ محمد باقر الحکیم جو عراقی سپریم انقلابی کونسل کے سربراہ تھے اور 2003ء میں ایک بم دھماکے میں نجفین میں ان کی شہادت ہوئی اور ان کی شہادت میں جو چار دھشت گرد ملوث تھے ان کا تعلق وہابی تکفیری دھشت گرد گروہ سے تھا ، آیت اللہ محمد باقر الحکیم شیعہ مکتبہ فکر کے شہید سادس کہلاتے ہیں
    – See more at: http://lubpak.com/archives/325003#sthash.Kpoqtbsm.dpuf
    http://lubpak.com/archives/325003

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *